نوید ظفر کیانی کے تلخ و شیریں کلام کا مرکز

Tag Archives: وطن

اپنے وطن میں کون سی انہونی بات ہے
دیکھا نہ کیجئے یونہی چشمہ اُتار کے

ایسے بھی مہربان ہیں اپنی پولیس میں
نوٹوں کو کاغذات سمجھتے ہیں کار کے


میرے بیٹے میں کچھ بھی نہیں
تو مرے واسطے ایک لعل ثمیں
ہاں مگر جب پکارے وطن کی زمیں
میرے بیٹے تری ذات کچھ بھی نہیں
اِس سے بڑھ کر نہ ہوں میں تمہارے لئے
اور نہ میری نگاہوں میں وقعت تری
۔۔۔۔۔۔۔۔
میرے بیٹے ! مرے چاند !! میرے جگر
تیری وقعت اگر ہے تو بس ہے یہی
جب وطن کو ضرورت پڑے
تیرے تن میں کوئی قطرۂ خوں نہ باقی بچے
اِس کی حرمت پہ تو کٹ مرے
اِس کے ماتھے کا جھومر بنے


یہ فضیلت ہے ہمارے ہی وطن کو حاصل
اور ملکوں میں کہاں اس کا چلن ہوتا ہے
                            ۔
بھول کر بھی اُسے ہوٹل نہیں کہتے ہیں ہم
کاکروچوں سے تہی جس کا کچن ہوتا ہے