اہلِ وفا کو نخرے دکھائے تو کیا کروں
ہر بات پر وہ گال پھُلائے تو کیا کروں

لٹکایا تو ہے حسن نے اُلٹا ہزارہا
اس پر بھی عشق باز نہ آئے تو کیا کروں

کب تک دلاؤں یاد تقاضے وفاؤں کے
جب وہ پلانا چاہے نہ چائے تو کیا کروں

آتش بجاں ہے نمبر ملا کر غلط سلط
متھے لگے وہ بیٹھے بٹھائے تو کیا کروں

پہلا سا پیار اب بھی کوئی مانگتا تو ہے
بڑھ جائیں لاریوں کے کرائے تو کیا کروں

اُس کوبتا دیا تھا کہ انصاف اب کہاں
سرسوں ہتھیلیوں پہ جمائے تو کیا کروں

ہو کر تو آؤں اُس کی طرح پارلر سے میں
پر دیکھ کر وہ ہنستا ہی جائے تو کیا کروں

سیکھی نہیں ہے اُس نے زباں پیار کی تو کیا
سمجھے نہ کوئی رمز کنائے تو کیا کروں

ٹُن ہوں میں آزرؤں کے فٹ پاتھ پر کہیں
کھولے نہ کوئی دل کی سرائے تو کیا کروں

میں نے تو ورغلایا ہے مقدور بھر اُسے
بدلے نہ پھر بھی یار کی رائے تو کیا کروں

جس ’’باؤ ‘‘سے ڈراتی تھی بچپن میں مجھ کو ماں
بن کر ’’بہو‘‘ خود اُن کو ڈرائے تو کیا کروں

اپنی طرف سے میں کسی ہیرو سے کم نہیں
اللہ میاں کی سمجھے وہ گائے تو کیا کروں

جس کے لئے غزل پر غزل لکھ رہا ہوں میں
سُن کر کرے وہ ہائے نہ وائے تو کیا کروں