پھر انتخابات میں خطابت
بانٹے گی خسارے دیکھتے ہی

بچوں کی طرح لپکتے ہیں ہم
خوابوں کے غبارے دیکھتے ہی

Advertisements