نظمِ قومی میں ہم تم
اس ترتیب کے عادی ہیں

تخت ہے رسہ گیروں کا
سچے لوگ فسادی ہیں

Advertisements