اپنی خوشبو میں بسایا ، میں تو اس قابل نہ تھا
بے جہت ہونے نہ پایا ، میں تو اس قابل نہ تھا

عقل کے رستے میں دوراہوں کے گُنجل تھے بہت
اپنے رستے پر چلایا ، میں تو اس قابل نہ تھا

زندگی کی دُہوپ میں جل جاتے خوابوں کے نگر
مجھ پہ رکھا اپنا سایہ ، میں تو اس قابل نہ تھا

ڈال کر سچائیاں ادراک کی زنبیل میں
آئینہ خانے میں لایا ، میں تو اس قابل نہ تھا

سُرخرُو رہنے کی مجھ کو استطاعت کی عطا
وقت نے جب آزمایا ، میں تو اس قابل نہ تھا

وقت کی پہنائی کا ہرہر مکان و لا مکاں
دل کے کوزے میں سمایا ، میں تو اس قابل نہ تھا

نعمتیں دی ہیں مری اوقات سے بڑھ کر مجھے
شکر ہے تیرا خدایا میں تو اس قابل نہ تھا

Advertisements