سُخن نا آشنا ہوتا ہے بہرہ
کہ اِس لذت سے بے بہرہ ہے بہرہ
مگر مطلب کی باتیں
کبھی جو اِن سے کر دیں
کہی و ان کہی سُنتا ہے بہرہ

Advertisements