کون کہتا ہے نار کو دیکھا
لڑکے والوں نے عقد کی خاطر
لڑکی والوں کی کار کو دیکھا

استعاروں کنایوں میں ایسے
ہو رہی ہیں جہیز کی باتیں
شاعروں کو بھی رشک آ جائے

شرم سے چُور دیکھ کر دلہن
ایک خاتون نے کہا ۔۔۔ توبہ !
کتنا مشکل ہے یہ حیا کا فن

اشک جو بے طرح بہائے گئے
رُخصتی کے لئے بطورِ خاص
مگرمچھوں سے مانگ لائے گئے

وقت وہ بھی دولہا پہ لایا گیا
رونمائی پہ رو کے کہنے لگے
کیا تمہیں سے نکاح پڑھایا گیا ؟

Advertisements