‎رہا ہے قوم کے غم میں جو مضطر
سکوں کس بات پر اُس کو ملا ہے
پئے اسلام جو دھڑکا ہے ہر دم
وہ دل خاموش کیسے ہو گیا ہے
Advertisements