ہمیشہ کی طرح اس بار بھی ہم
نچھاور تیرے عہدِ دلنشیں کے

اگرچہ جانتے ہیں’ بوجھتے ہیں
بدل جاؤ گے’ زرداری کہیں کے

Advertisements