اُس کی آنکھوں سے بیاں تو ہوتا
میرے ہونے کا نشاں تو ہوتا

کھول لیتا میں سفر پاؤں سے
منتظر کوئی مکاں تو ہوتا

رہِ منزل بھی نظر آ جاتی
اُس کو احساسِ ذیاں تو ہوتا

یونہی یکطرفہ محبت میں جلے
آگ جب تھی تو دہواں تو ہوتا

پاسِ ناموس تھا محفل میں تو پھر
کچھ نہ کچھ بعد ازاں تو ہوتا

آبلہ پائی کا ابلاغ ظفر
نقشہء کوئے بُتاں تو ہوتا

Advertisements