رنگِ شب ہجراں بھی بہ اندازِ دگر ہے
اِس درد کا عنواں بھی بہ اندازِ دگر ہے

کام آتے نہیں ترکِ تعلق کے ارادے
یہ منزلِ آساں بھی بہ اندازِ دگر ہے

ہم شاخ سے ٹوٹے ہوئے پتوں کی طرح ہیں
امیدِ بہاراں بھی بہ اندازِ دگر ہے

سب سوختہ ساماں ہیں مکیں ہوں کہ مکاں ہوں
شہروں کا چراغاں بھی بہ اندازِ دگر ہے

شنوائی کا امکاں ہے نہ گویائی کا یارا
احوالِ دل و جاں بھی بہ اندازِ دگر ہے

لگتا ہے کہ اب کے میرے اندر سے اُٹھے گا
اندازہء طوفاں بھی بہ اندازِ دگر ہے

ہم بھی تو بدلتی ہوئی اقدار میں بہتے
جب خاطرِ یاراں بھی بہ اندازِ دگر ہے

Advertisements