غم ہستی کے عنواں بانٹ دوں گا
یہ اوراقِ پریشاں بانٹ دوں گا

مرے نزدیک خوشیاں ہیں امانت
الٹ دوں گا میں داماں بانٹ دوں گا

تھما دوں گا دئے سب کو چمن میں
نئے موسم کے ارماں بانٹ دوں گا

مری مشکل بڑھاتی جائے دنیا
میں اس کو کر کے آساں بانٹ دوں گا

کسی منظر کو دھندلانے نہ دوں گا
میں اپنا سب چراغاں بانٹ دوں گا

صبا کی ایک تھپکی مل گئی تو
بہارِ نو کے عنواں بانٹ دوں گا

بکھر جاوں گا میں چہرہ بہ چہرہ
جو مجھ میں ہے وہ انساں بانٹ دوں گا

خزاں کو گھیر لوں گا ہر طرف سے
ظفر خوابِ بہاراں بانٹ دوں گا

Advertisements